روسی حکومت کے ناقد صحافی کو یوکرین میں گولی ماردی گئی

ناقد روسی صحافی آرکاڈی ببچینکو کو مشرقی یوکرین میں گولی مار دی گئی جو کہ اسپتال جاتے ہوئے دم توڑ گئےایک روسی صحافی آرکاڈی ببچینکو کو مشرقی یوکرین میں گولی مار دی گئی ہے۔ پولیس نے بتایا کہ ببچینکو کو زخمی حالت میں گھر سے ہسپتال منتقل کیا جا رہا تھا کہ وہ راستے میں ہی دم توڑ گئے۔
حکام کا خیال ہے کہ ممکنہ طور پر اس واقعے کا تعلق ان کے پیشہ ورانہ کام سے ہے۔41 سالہ ببچینکو 1990 اور 2000ء کی دہائیوں میں چیچنیا کی جنگ لڑ چکے تھے تاہم، بعد ازاں ایک معروف صحافی بننے کے بعد وہ روسی حکومت کے ناقد بن گئے تھے۔ انہوں نے دھمکیوں کے بعد 2017 کے اوائل میں روس سے نقل مکانی کر لی تھی۔

مشرقی یوکرائن میں روسی صحافی آرکاڈی ببچینکو کے قتل کے بعد کییف اور ماسکو ایک دوسرے پر الزام تراشی کر رہے ہیں۔ کریملن کے ایک ترجمان نے اس واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یوکرائن صحافیوں کے لیے ایک خطرناک جگہ ہے۔ اس سے قبل کییف حکومت نے کہا تھا کہ قتل کی اس واردات میں روس ملوث ہو سکتا ہے۔ اکتالیس سالہ ببچینکو دو سال قبل دھمکیوں کی وجہ سے روس سے یوکرائن نقل مکانی کر گئے تھے۔ انہیں منگل کو ان کے گھر کی سیڑھیوں پر گولی مار دی گئی تھی۔