اسپین: پیدرو سانچز کی کابینہ میں خواتین زیادہ، مرد کم

میڈرڈ: یورپی یونین کی حامی اسپین کی حکومت کی 17 رکنی کابینہ نے حلف اٹھا لیا جس میں 11 خواتین شامل ہیں۔غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ملک کے سوشلسٹ وزیر اعظم پیدرو سانچز کی کابینہ میں شامل خواتین کو دفاع اور اقتصادی امور جیسی اہم وزارتیں بھی سونپی گئی ہیں، جبکہ کابینہ میں 6 مرد شامل ہیں۔
پیدرو سانچز کی جانب سے کابینہ میں خواتین کو مردوں کے مقابلے میں زیادہ تناسب میں شامل کیے جانے کے بعد اسپین کی حکومت وہ یورپی حکومت بن گئی ہے جس کی کابینہ میں خواتین کا تناسب سے سے زیادہ ہے۔سویڈن کی کابینہ میں 12 خواتین اور 11 مرد شامل ہیں۔تاہم پیدرو سانچز کی انتظامیہ کے لیے خطرہ ابھی ختم نہیں ہوا جس کی حکومتی مدت 2020 میں مکمل ہوگی۔
پیدرو سانچز کی سوشلسٹ پارٹی کو 350 نشستوں پر مشتمل کانگریس میں سے صرف 84 سیٹیں حاصل ہیں، 1970 کی دہائی میں اسپین میں جمہوریت کے لوٹنے کے بعد کسی بھی ہسپانوی حکومت کی پارلیمنٹ میں سب سے کم موجودگی ہے۔
واضح رہے کہ 46 سالہ پیدرو سانچز نے گزشتہ جمعہ کو پارلیمنٹ میں عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے قدامت پسند مگر تجربہ کار وزیر اعظم ماریانو راجوئے کی حکومت کو ختم کردیا تھا۔عدم اعتماد کے ووٹ کی آواز ماریانو راجوئے کی پاپولر پارٹی (پی پی) کے سابق عہدیداران پر کرپشن کی فرد جرم عائد ہونے کے بعد اٹھنا شروع ہوئی، جس نے تقریباً 6 سال تک حکومت کی۔