سپین کے آمر فرانکو کی قبرکشائی کیلئے پارلیمنٹ کی قرادادمنظور،باقیات عام قبرستان میں دفن کی جائیں گی

میڈرڈ(مرزاندیم بیگ)سپین کی پارلیمنٹ نے سابق آمر اور سابق آرمی چیف جنرل فرانکو کی قبر کا نشان تک مٹانے کا فیصلہ کرلیا اور قبرکشائی کی منظوری دیدی ہے اور انکے جسد خاکی کی باقیات کو کسی عام سے مقام پر منتقل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
قبرکشائی کی قرارداد کی حمایت میں 172ووٹ ڈالے گیے جبکہ دو ووٹ مخالفت میں ڈالے گئے۔دائیں بازو کی دوجماعتوں پاپولر پارٹی اور سیوتادانس نے جنرل فرانکو کی قبرکشائی کیلئے ہونیوالی ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔قبرکشائی کیلئے پیش کی گئی قراردادمیں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ موجودہ قبر کا مقام وطن کیلئے قربان ہونیوالوں کے نسبت سے ہے اور اس قبرستان میں 1936 سے 1939 تک جاری رہنے والی خانہ جنگی میں ہلاک ہونیوالے دفن ہیں اور اس خانہ جنگی کا باعث جنرل فرانکوتھے اور اس مقام پر ایک آمر کو دفن کرنا خانہ جنگی کے ہلاک شدگان کی توہین ہے۔
قراردادکی منظوری کے بعد سوشل ویب سائٹ ’’ٹوئیٹر‘‘پر ٹویٹ میں وزیراعظم پیدرو سانچزنے لکھا کہ آج انصاف اور قومی عظمت کی فتح ہوئی ہے اور آج جمہوریت پہلے کی نسبت مضبوط تر ہوئی ہے۔یادرہے کہ آمر ڈکیٹرکا دوراقتدار1939سے1975تک رہا ہے۔واضح رہے کہ اس سے قبل سپین کے کئی شہروں سے بھی آمرفرانکو کے یادگاری بت بھی گرادئیے تھے