ہسپانوی وزیر خارجہ یوزَیپ بورَیل کو ملکی سٹاک مارکیٹ کے نگران ادارے نے اپنے استحقاق کے غلط استعمال پر جرمانے کی سزا سنا دی

جمہوریت میں قانون بالا دست ہو تو کوئی بھی ملزم عام یا خاص نہیں بلکہ محض ملزم ہوتا ہے۔ اسپین میں ملکی وزیر خارجہ یوزَیپ بورَیل کو ملکی سٹاک مارکیٹ کے نگران ادارے نے اپنے استحقاق کے غلط استعمال پر جرمانے کی سزا سنا دی ہے۔ہسپانوی دارالحکومت میڈرڈ سے بدھ دس اکتوبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق اسپین میں ملکی سٹاک مارکیٹ کا نگران ادارہ نیشنل سکیورٹیز مارکیٹ کمیشن یا CNMV کہلاتا ہے۔ اس ادارے نے آج تصدیق کر دی کہ اس نے 27 ستمبر کو ملکی وزیر خارجہ بورَیل کو جرمانے کی سزا سنا دی تھی۔یوزَیپ بورَیل 2016ء میں ایک مشیر کے طور پر ہسپانوی شہر سیوِیا میں قائم کاروباری گروپ آبَینگوآ (Abengoa) کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے ایک رکن تھے۔ ان پر الزام تھا کہ انہوں نے اس ادارے کے مشیر کے طور پر ایسی مخصوص اطلاعات کا غلط استعمال کیا تھا، جو کمپنی کا ایک ڈائریکٹر ہونے کی وجہ سے ان کے علم میں تھیں۔
ہسپانوی نیشنل سکیورٹیز مارکیٹ کمیشن کی دستاویزات کے مطابق ملکی وزیر خارجہ کے خلاف اس کارروائی کا آغاز گزشتہ برس جولائی میں کیا گیا تھا۔ ان پر عائد کردہ ’اندرونی معلومات کے غلط استعمال‘ کے الزام کا تعلق آبَینگوآ گروپ کے حصص کی ایسی فروخت سے تھا، جن کی مالیت تو صرف نو ہزار یورو کے قریب تھی لیکن جن کی فروخت کا فیصلہ کرتے ہوئے یوزَیپ بورَیل نے ایسی اندرونی معلومات استعمال کی تھیں، جو تب تک شائع نہیں ہوئی تھیں۔
میڈرڈ میں سٹاک مارکیٹ ریگولیٹرز کے مطابق بورَیل نے تب جو شیئرز بیچے تھے، وہ ان کی اپنی ملکیت نہیں بلکہ ان کی ایک قریبی شخصیت کی ملکیت تھے۔ روئٹرز کے مطابق سکیورٹیز کمیشن نے یہ معلومات ہسپانوی جریدے ’لا انفورماسیون‘ کی اس رپورٹ کے بعد جاری کیں، جس کے مطابق یہ شیئرز یوزَیپ بورَیل کی سابقہ اہلیہ کی ملکیت تھے۔یہ نہیں بتایا گیا کہ ہسپانوی وزیر خارجہ کو کتنا جرمانہ کیا گیا ہے۔ تاہم خود وزیر خارجہ بورَیل نے بھی یہ اعتراف کر لیا ہے کہ سرکاری ریگولیٹرز کی طرف سے ان کے خلاف فیصلہ کیا گیا ہے، جس کا ان کے وکلاء ممکنہ جوابی قانونی کارروائی سے قبل جائزہ لے رہے ہیں۔
وزیر خارجہ کو جرمانے کی سز اسنانے والی سرکاری مالیاتی اتھارٹی کے مطابق اس فیصلے کے خلاف بورَیل اگر چاہیں تو ملکی وزارت اقتصادیات کے ایک متعلقہ شعبے میں اپیل کر سکتے ہیں اور اگر وہ اپنی اپیل پر ممکنہ وزارتی فیصلے سے بھی مطمئن نہ ہوں، تو انہیں اسپین کی کسی بھی عام عدالت میں اپیل دائر کر دینے کا حق بھی حاصل ہو گا۔