سانحہ سانت روک،رہائشی عمارت میں آتشزدگی دو پاکستانی زاہد اللہ اور عبدالرزاق جاں بحق،قونصل جنرل کی تصدیق

بارسلونا(دوست نیوز)پانچ جنوری کو بارسلونا کے نواحی ضلع بادالونا میںرہائشی عمارت میں آتشزدگی سے تین افراد جاں بحق ہوئے جن میں دو پاکستانی زاہد اللہ اور عبدالرزاق شامل ہیں۔گزشتہ چار روز کی میڈیکل تحقیق کے بعد لاپتہ دو پاکستانی زاہد اللہ اور عبدالرزاق کی شناخت ہوگئی۔جس کا باقاعدہ اعلان قونصل جنرل علی عمران چوہدری نے مقامی صحافیوں کو پریس بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔
انہو ں نے کہا کہ زاہد اللہ جس کی عمر 50 سال اور پاکستان میں لالہ موسی سے تعلق ہے جبکہ عبدالرزاق 45سال کی عمر کے ہیں اور سرگودھا سے تعلق ہے۔ قونصل جنرل علی عمران چوہدری نے کہا کہ زاہد اللہ کی میت کو جلد پاکستان روانہ کر دیا جائے گا۔ کیونکہ اس کی مکمل شناخت ہو گئی ہے فنگر پرنٹ میچ کر گئے ہیں ہماری جلد از جلد کوشش ہوگی اور ہم پی آئی اے کی پرواز کا بھی انتظار نہیں کریں گے کسی بھی پہلی جانے والی پروازسے بھیج دیں گے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ان دو میتیوں کو حکومت پاکستان کے خرچ پر پاکستان بھیجا جائے گا۔
قونصل جنرل نے کہا کہ عبدالرزاق کی شناخت ابھی مکمل نہیں ہوئی یونہی اس کی بھی شناخت مکمل ہوئی میت پاکستان بھیج دی جائے گی۔ قونصل جنرل علی عمران چوہدری نے کہا کہ پاکستان میں زاہد اللہ اور عبدالرزاق کے لواحقین سے میری بات ہوئی ہے۔
قونصل جنرل علی عمران چوہدری نے پریس بریفنگ میں بتایا کہ ایک تیسرا پاکستانی تنویر احمد بارسلونا کے مقامی ہسپتال میں زندگی کی جنگ لڑ رہا ہے۔
یاد رہے پانچ جنوری کی الصبح بارسلونا کے نواحی ضلع بادالونا کے محلہ سانت روک کی ایک رہائشی عمارت میں شارٹ سرکٹ کی وجہ سے آگ بھڑک اٹھی جس نے دیکھتے ہی دیکھتے دس منزلہ عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔
لوگوں نے عمارت کی کھڑکیوں سے چھلانگیں لگا کر اپنی جانیں بچائیں۔اور تین بد قسمت آگ کی لپیٹ میں آکر اپنی جان کی بازی ہار گئے29 افراد زخمی ہوئے جن میں 14 افراد کو ہسپتال میں منتقل کیا گیا تھا۔