اسپین، جنوبی امریکا اور وسطی امریکا کے متعدد ممالک میں کیا مومو چیلنج ایک بار پھر سر اٹھا رہا ہے؟

گزشتہ سال واٹس ایپ میں ایک گیم مومو چیلنج سامنے آیا تھا جس کے بارے میں کہا گیا تھا کہ یہ بچوں میں خودکشی کے رجحان کو فروغ دیتا ہے۔اس چیلنج میں بچوں کو خطرناک سرگرمیوں کا حصہ بننے کے لیے اکسایا جاتا تاکہ وہ خود کو مارلیں۔ایک جاپانی مجسمے پر مبنی تصویر کو مومو کا نام دیا گیا جو کہ ایک جاپانی اسپیشل ایفیکٹ کمپنی لنک فیکٹری نے تیار کیا تھا، مگر نامعلوم افراد اسے فیس بک، واٹس ایپ اور یوٹیوب پر استعمال کرنے لگے۔
یہ چیلنج 2018 کے وسط میں اس وقت سامنے آیا جب ارجنٹائن سے تعلق رکھنے والی 12 سالہ بچی کی خودکشی کو اس سے جوڑا گیا تاہم اس کی تصدیق انتظامیہ نے نہیں کی۔اس وقت اسپین، جنوبی امریکا اور وسطی امریکا کے متعدد ممالک کی پولیس نے بچوں کے لیے انتباہی پیغامات جاری کیے کہ وہ اجنبی افراد سے بات کرنے سے گریز کریں اور مومو چیلنج کے بارے میں تفتیش کا بھی اعلان کیا۔اور اب ایک بار پھر موموچیلنج کے بارے میں خدشات سامنے آئے ہیں اور مختلف لوگوں نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ کردار یوٹیوب ویڈیوز میں سامنے آرہا ہے اور بچوں کو خود کو مارنے اور والدین سے کلپ کو چھپانے کی ہدایات دیتا ہے۔