اسپین کے جنوبی صوبے المیریا کے شہر ال اخیدو میں تارکین وطن مزدوروں کا استحصال

یورپ میں سب سے زیادہ سبزیوں اور پھلوں کی کاشت اسپین کے جنوبی صوبے المیریا میں کی جاتی ہے لیکن اس علاقے میں بسنے والے تارکین وطن افراد استحصال کا بھی شکار ہیں۔ ان مزدوروں کو مقامی کسان نہایت کم اجرت دیتے ہیں۔
اسپین کے جنوبی صوبے المیریا کے شہر ال اخیدو کو ملکی زراعت کی صنعت کا مرکز کہا جاتا ہے۔ ال اخیدو کے نوے ہزار رہائشیوں میں سے زیادہ تر افراد زراعت کے پیشے سے وابستہ ہیں۔ ہر صبح سورج طلوع ہونے سے قبل دو درجن سے زائد تارکین وطن مزدور روزگار کی تلاش میں اس شہر کے ایک چوک پر جمع ہوتے ہیں۔ تارکین وطن افراد اس امید سے وہاں آتے ہیں کہ مقامی کسان ان کو سبزیاں اگانے والے گرین ہاؤس میں مزدوری کا کام دیں گے۔
مراکش سے تعلق رکھنے والا سینتالیس سالہ عبدالرزاق کے مطابق اسے گزشتہ پانچ روز سے کوئی کام نہیں ملا۔ عبدالرزاق کے بقول وہ صبح چھ سے نو بجے تک انتظار کرتا ہے لیکن ابھی تک اس کو کام نہیں مل سکا۔ اس کے ساتھ گیمبیا کا سابق پولیس افسر لی یالو بھی موجود ہے۔ یالو کے مطابق یورپ میں بھی روزگار کے مواقع افریقہ کی طرح ناساز ہیں۔ تاہم یالو نے کھیتوں میں نہ کبھی کام کیا تھا اور نہ ہی اس کا کبھی تصور کیا تھا۔
المیریا میں 78000 ایکڑ کی اراضی پر مشتمل کھیتوں میں سالانہ 3.5 ملین ٹن پھل اور سبزیاں اگائی جاتی ہیں۔ یہ پیداوار نہ صرف مقامی کسان کرتے ہیں بلکہ کئی ملٹی نیشنل کمپنیاں بھی یہاں سبزیاں اور پھل اُگا کر جرمنی اور برطانیہ سمیت یورپ کے بیشتر ممالک کی سپر مارکٹوں کو سپلائی کرتی ہیں۔
دوسری جانب اس علاقے کو افریقی مہاجرین، یورپی حدود میں داخلے کے لیے بھی استعمال کرتے ہیں۔ مقامی حکام کے مطابق گزشتہ برس 400 کشتیوں کے ذریعے قریب 12000 افریقی تارکین وطن المیریا میں داخل ہوئے۔ مقامی مزدوروں کی یونین کے کارکن گارسیا کوئے نے بتایا کہ تارکین وطن مزدوروں کو اکثر استحصال کا سامنا ہوتا ہے اور وہ لوگ اس صورتحال کو بہتر بنانے کا مطالبہ بھی نہیں کر سکتے۔
علاوہ ازیں مقامی حکام کے مطابق تیس فیصد سے زائد تارکین وطن المیریا میں غیر قانونی طور پر کام کرتے ہیں۔ گارسیا کے بقول تارکین وطن مزدوروں کو معاہدے کے بغیر ملازمت دی جاتی ہے اور مقامی کسان قانونی یومیہ اجرت 55 یورو کے بجائے 32 سے 40 یورو ادا کرتے ہیں۔ گارسیا نے یہ بھی بتایا کہ گرین ہاوسز میں استعمال ہونے والی زہریلی کیڑے مار ادویات سے یہاں کام کرنے والے کارکنوں کی صحت بُری طرح متاثر ہوتی ہے۔ چند روز قبل ہی مراکش سے تعلق رکھنے والا ایک کارکن ہلاک ہوگیا تھا تاہم ابھی یہ واضح نہیں کہ اس تارک وطن کی موت زہریلی ادویات کی وجہ سے ہوئی تھی یا نہیں۔