اسپین میں مزدورں اور کمپنی مالکان سے متعلق معلومات

اسپین میں مزدورں اور کمپنی مالکان سے متعلق معلومات
تحریر۔عمران ملک ۔۔ادارہ پاک ائی کئیر بارسلونا
مزدور ہمیشہ چکی میں پسہ ہے اور یورپ خاص کر اسپین دن بدن ایسی کمپنیوں کا گورنمنٹ کی طرف سے قانونی شکنجہ مزید سخت کیا جا رہا ہے ۔جو مزدور کا خون نچوڑتی ہیں ۔اور مختلف حیلوں اور بہانوں سے ،اس کے وجود اور جسمانی مشقت سے اپنے کاروبار کو فائدہ اور زیادہ سے زیادہ پیسہ کمانا مقصود ہوتا ہے ۔اور یہ برائی اور حق تلفی صرف ایشائی ممالک کے لوگوں میں زیادہ پائی جاتی ہے ۔ہم بات کریں گے ،اپنے لوگوں کی، پاکستانی کمپنی مالکان تو اپنے کاروبار کی ترقی کی پہلی سیڑھی ہی اپنے مزدور کی گردن پر پاوں رکھ کر شروع کرتے ہیں ۔
مزدورں کی آڑ میں لاکھوں کا ٹیکس بچایا جاتاہے جو ان کے کاروبار کی وسعت میں اضافہ کرتا ہے ۔اسلام میں تو مزدور کی مزدوری اس کا پسینہ خشک ہونے سے پہلے دینے کا بولا گیا ہے ۔اسپین کا آسیندا ( Hacienda ) یورپ کا کمزور ترین اسیندا سمجھا جاتا ہے ، اسپین مین اسیندا ٹیکس ڈیپارٹمنٹ کو کہتے ہیں ۔اسیندا نے مختلف انسپیکشن اور کنڑول کے ذریعے ،۔مظلوم اور کمپنی مالکان کی طرف سے زیادتی کا شکار لوگوں کو کنڑول کرنے کی ناکام کوشش کی ہے ،اور نتیجہ صفر رہا ،
لیکن 12 مئی کو اسیندا ( Hacienda ) کی طرف سے ایک ایسے قانون کا اطلاق کر دیا گیا ،جس سے ظالم مالکان کے بچنے کے چانس نہ ہونے کے برابر ہیں ۔یعنی اب آپ چار گھنٹے کا کنٹریکٹ کر کے ورکر سے 12 یا 14 گھنٹے کام نہیں کروا سکتے ۔12 مئی 2019 سے، تمام کمپنیوں نے ورکر کے کام پے داخل ہونے اور نکلنے کی ٹائمنگ شیڈول ہر وقت پاس رکھنا ہو گا ۔اور آپ جتنا کنڑیکت ہے، اس سے اوپر ایک منٹ بھی کام نہیں کروا سکتے ۔ اور اگر کمپنی مالکان ایکسڑا گھنٹے کام کرواتے ہیں، تو ان ایکسڑا گھنٹوں کی باقاعدہ ٹائمنگ شیٹ تیار کرنی ہونگی ۔
دن کو مناسب ریسٹ اور ہفتے میں دو چھٹیاں لازم دینا ہونگی ۔اور 2 ایکسڑا تنخواہیں ۔پروفیشنل کیٹیگری کے لوگوں کو ہفتے اور اتوار چھٹی دینا لازم ہو گا ۔اور اگر وہ کسی ریسٹورنٹ یا کسی ایسے پیشے سے منسلک ہیں ،تو اس کی کام اور جاب کی مناسبت سے اس کے کام اوقات مقرر کیے جائیں، لیکن وہ ہر وقت ٹائمنگ شیٹ کے ساتھ کام کرے گا ۔آسیندا ( Hacienda ) نے 12 مئی سے تمام کمپنیوں کے مزدورں کے اوقات کار کی ٹائمنگ لسٹ کو کنٹرول کرنے کے سینکڑوں انسپکٹر تیار کر لیے ہیں، جو چھٹیوں کے بعد کم وبیش 4000 انسپیکشن کریں گے ۔اور مزدور اوقات کار نہ رکھنے والوں کو 650 سے لیکر 6500 تک جرمانہ ہو سکتا ہے، اور دو مرتبہ خلاف ورزی کرنے والے کمپنی مالکان کو 11 گنا جرمانہ کی سزا دی جائے گی ۔کسی بھی ورکر کے ساتھ زیادتی کی صورت میں، اسے رپورٹ کرنے کا حق ہو گا ،یا وہ خفیہ طور اسیندا کے آفس شکایت لگا سکتا ہے ۔
اور یہ نیا قانون اگر کوئی کمپنی والا سوچے کے وہ کوئی حیلہ بہانہ بنا کر انسپکٹرز کو بیوقوف بنا لے گا ،نئے قانون کے مطابق تمام کمپنی مالکان کو مزدور اوقات کار شیڈول پورے چار سال تک سنبھال کر رکھنا ہوگا ۔اس نئے قانون سے مزدور طبقے میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور ٹیکس چور کمپنی مالکان اور مزدور سے قانون سے زیادہ کام کروانے والوں میں سخت پریشانی پائی جاتی ہے ۔اب یہ تو وقت ہی بتائے گا ،کمپنی مالکان کوئی نیا چور راستہ نکالتے ہیں ،یا مزدور کو واقعہ کھویا ہوا مقام مل جائے گا ۔ویسے جو مزدور کو خوش رکھتا ہے ،اور اس کے ساتھ نرم رویہ اور اس کے حقوق کا خیال رکھتا ہے ،اللہ تعالی ان کے کاروبار میں برکت اور ترقی دیتا ہے۔اب قانون آ گیا ہے ،اور فیصلہ ہمارے ہاتھ میں ہے۔