پاکستانی سفارت خانہ میڈرڈ کے پاس کمیونٹی کی فلاح کی مد میں 2 ملین + یورو موجود ہیں، اردو اسکول، کمیونٹی سنٹر بنایا جائے،چوہدری عبدالغفار مرہانہ

بارسلونا(دوست مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستانی کمیونٹی اسپین کے لئے ایک اچھی خبر ہے۔قونصل جنرل عمران علی چوہدری کی موجودگی میں جو انفارمیشن ملی ہے۔کہ ہمارے ایمبیسیڈر کے پاس 2 ملین + یورو پڑے ہوئے ہیں۔جو پاکستانی کمیونٹی کی ویلفیئر کے لئے ہیں۔وہ ہمارے لئے انتہائی خوشی کی بات ہے۔اور ہمیں یہ بھی پتہ چلا ہے کہ سفارت خانہ یہ پیسے کمیونٹی کی فلاح کے لئے لگانا چاہ رہی ہے۔ان خیالات کااظہار یونائیٹڈ فیڈریشن اسپین کے صدر چوہدری عبدالغفار مرہانہ نے اپنے ویڈیو پیغام میں کیا ۔ انہو ں نے مزید کہا کہ ہم خصوصی طور پر اپنی قونصلیٹ اور سفارت خانہ سے درخواست کرتے ہیں۔کہ ہمارے بچوں کے لئے جوکہ فرانس میں پہلے ہی اس کا افتتاح ہو چکا ہے۔بچوں کے لئے اردو کا اسکول سفارت خانہ نے اشتراک کے ساتھ جاری کیا ہے۔یہاں اسپین میں بھی اس کی اشد ضرورت ہے۔اور سب سے بڑھ کر جو ہمارا کمیونٹی سنٹر ہے یہاں پر کمیونٹی اکٹھی ہو کر اپنے مسائل پر کام کر سکتی ہے۔ہر خوشی اور غمی کے لئے یہ سنٹر ہونا انتہائی ضروری ہے۔اس بات کا میں حوالہ دوں گا کہ قونصل جنرل عمران علی چوہدری نے بھی اس بات کا اعادہ کیا تھا ۔کہ ہم اس سنٹر کو بنائیں گے۔ہم بارسلونا میں اور یہاں پر کمیونٹی کی زیادہ تعداد ہے وہاں پر کمیونٹی سنٹر چاہیئے۔ہمارے بچوں کو ہماری بہنوں کو ایسی جگہ ملنی چاہیئے۔یہاں پر بیٹھ کر وہ اپنے دکھ سکھ کی بات کر سکیں۔ہمارے بہت سارے مسائل ہیں ہمارے بچوں کے آپس میں کوئی روابط نہیں ہیں ہمارے بچے اپنی زبان سے دور ہو رہے ہیں۔ہمارے بچے اپنے کلچر سے دور ہو رہے ہیں۔اور اگر ہم قونصلیٹ یا سفارت خانہ سے درخواست کرتے ہیں۔کہ اس کام کو جلد از جلد کیا جائے ۔اگر ہماری درخواست پردھیان نا دیا گیا جو صرف میری یا میرے بھائیوں کی نہیں ہے سب پاکستانیوں کی ہے جو کمیونٹی کی دس فیصد ویلفیئر کی مد میں بچنے والی رقم 2 ملین + یوروہماری ایمبیسی کے پاس موجود ہیں ہم یہ نہیں کہہ رہے کہ وہ غلط طریقے سے ہیں انہوں نے ہمارے لئے بڑا کام کیا ہے ۔لیکن اب اس رقم کو لگ جانا چاہیئے۔کیونکہ یہ ہمارے بچوں اور آنے والی نسل کے لئے بہت ضروری ہے۔ہم درخواست کرتے ہیں۔کہ اس پر جلد سے جلد کام کیا جائے۔اگر اس میں کوئی قانونی حوالے سے دقت ہے۔تو بھی آگاہ کریں۔ہم آپ کے لئے کوئی سہولت پیدا کر سکتے ہیں تو وہ بھی کریں گے۔اور اگر اس کو آگے پیچھے کیا گیا۔تو ہم ناچاہتے ہوئے بھی ایسے اقدام کرنے پر مجبورہونگے۔کیونکہ یہ سب کچھ ہمارے بچوں کے لئے ہے ہم درخواست کرتے ہیں کہ آپ اس کا کوئی درست ایجنڈا دیں ہم ان شاء آپ کی مدد کریں گے۔ہاں اگر ہمارے ساتھ انصاف نا ہوا۔تو حق بنتا ہے اس کے خلاف آواز بھی اٹھائی جائے،ہم سمجھتے ہیں کہ ہمارے سفیر محترم ہماری ویلفیئر کے لئے آئے ہیں اور وہ ہماری باتوں پر دھیان دیں گے۔وہ وقت آئے کہ ہم ان کو سیلوٹ پیش کریں