کاردت cardet zaragozaکی بلدیہ نے گاوں کے مرکزی چوک سے عبدالرحمن سوئم کا مجسمہ اتار دیا

ثاراگوسا(دوست نیوز)اسپین کے ضلع ساراگوسہ کے گاوں کاردت Cardet میں بلدیاتی انتخابات کے بعد بننے والی نئی مقامی حکومت جو پی پی، سیودانا اور بوکس تین جماعتی اتحاد پر مشتمل ہے نے مقامی چوک پر لگے عبدالرحمن سوئم (مسلم اسپین کے مشہور خلیفہ)کے مجسمہ کو اکھاڑ دیا۔
بلدیہ میں بوکس کے نمائیدے کا کہنا تھا کہ مقامی آبادی کا کہنا ہے کہ مجسمہ مقامی ثقافت اور تاریخ سے کوئی مطابقت نہی رکھتا اس پر مقامی آبادی منقسم تھی اب اس جگہ پر کوئی ایسی چیز قائم کی جائے گی جس پر مقامی آبادی متفق ہو اور جو مقامی ثقافت سے ہم آہنگ ہو۔امیگریشن اور مسلم مخالف نعروں کی بنیاد پر الیکشن میں کامیاب ہونے کے بعد بوکس پارٹی نے اپنے انتخابی نعروں کو عملی جامعہ پہنانا شروع کر دیا۔بلدیہ میں اپوزیشن جماعت کی نمائیدہ نے اس فیصلہ کی مخالفت کرتے ہوئے بوکس کے اس فیصلہ کو نفرت پھیلانے کی سیاست قرار دیا۔
889میں پیدا ہونے والے عبدالرحمن نے اکیس کی عمر میں امارات والد سے ورثہ میں پائی اور پچاس سال حکومت کی اس دوران اس نے پہلی دفعہ اندلس کی امارات کو الگ خلافت ڈکلئیر کرکے اپنے آپ کو اندلس کا خلیفہ کہلوانا شروع کیا اور جمعہ کے خطبہ میں اندلس کے خلیفہ کا نام پڑھنے کا آغاز کیا۔
اسپین میں بننے والی نئی سیاس جماعت بوکس VOXدائیں بازو سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی نمائندگی کرتی ہے۔اور زیادہ تر نسل پرست گنے جا رہے ہیں۔ بوکس (vox) کے بڑوں کا تعلق بھی کہیں نہ کہیں اسپین کے ڈکٹیٹر فرانکو سے جوڑا جا رہا ہے۔بوکس متحدہ اسپین کی حامی ہےاور علیحدگی پسندوں کو واضع پیغام دیا اگر ان کی حکومت آئی تو وہ تمام علیحدگی پسندوں کو جیل میں ڈالیں گے،جو اسپین کے اتحاد کو توڑ ے گا اس سے سختی سے نبٹا جائے گا۔اس کے علاوہ مسلمانوں اور تارکین وطن افراد کے خلاف بھی سخت نظریہ رکھتی ہے۔