اطالوی ساحل پر پھنسے30تارکین کو لینے کیلئے فرانس تیار

پیرس(دوست نیوز)فرانس گریگوریٹی اطالوی کوسٹ گارڈ پر پھنسے 116 تارکین وطن میں سے 30 کو لینے کے لئے تیار ہے لیکن یہ صرف پناہ گزینوں کو لے گا، معاشی تارکین وطن کو نہیں۔ گزشتہ سہ پہر کے اختتام تک، 116 مرد تارکین وطن سلوینی سسلی کے ساحل میں کشتی پر سوار ہونے پر مجبور ہوگئے تھے۔فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون جنہوں نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ 14 یورپی یونین کے ارکان نے بحیرہ روم میں مہاجرین کی تقسیم کے منصوبے کی منظوری دے دی ہے اور آٹھ جین گورڈن کمنگ نے وصول کی تھی اس میسیج میں وڈلر نے کہا تھا کہ نک بولز اگر تم نے بریگزٹ کی منظوری دی تو میں تمہاری زبان کاٹ دوں گا ہم جانتے ہیں کہ تم کہاں رہتے ہو اور تمہاری آنے جانے کے اوقات کیاہیں اور ہم مذاق نہیں کررہے ہیں۔ عدالت کوبتایا گیا کہ ملزم وڈلرنے اعتراف کیا کہ شراب نوشی اس کامسئلہ ہے اور2002 کے بعد سے وہ 18مرتبہ سزا ئیں کاٹ چکاہے جن میں مجرمانہ طورپر املاک کو نقصان پہنچانے، زیادہ شراب نوشی، ہنگامہ آرائی اور ایک پولیس کانسٹیبل کو زدوکوب کرنے کے الزامات شامل تھے، عدالت نے اسے اس پر عاید کئے گئے تمام الزامات کامجرم قرار دیتے ہوئے اسے ہر الزام پر 18-18 ہفتے کی سزائیں سنائیں تاہم تمام سزائیں ایک ساتھ چلیں گی۔ اس کے علاوہ اسے300 پونڈ عدالتی خرچ کے طورپر اور115پونڈوکٹم سرچارج کے
طورپر ادا کرنے کابھی حکم دیا گیاہے۔اسے مجرمانہ رویئے کا ملزم بھی قرار دیاگیا جس کے تحت اسے خود اپنے رکن پارلیمنٹ کے علاوہ کسی بھی رکن پارلیمنٹ سے ملاقات کی ممانعت کی گئی ہے۔