مودی یواے ای کے اعلیٰ ترین سول ایوارڈ کے حقدار نہیں، ناز شاہ

لندن (مرتضیٰ علی شاہ) لیبر پارٹی کی رکن پارلیمنٹ ناز شاہ نے متحدہ عرب امارات کے ولی عہد اور فوج کے سپریم کمانڈر شیخ محمد بن زاید کے نام ایک خط میں لکھا ہے کہ بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوث ہیں، مودی غیر قانونی طور پر مقبوضہ کشمیر کے عوام کی خود مختاری ختم کر رہے ہیں اس لئے وہ مودی یواے ای کے اعلیٰ ترین سول ایوارڈ کے حقدار نہیں ہیں، اپنے خط میں انھوں نے لکھا ہے کہ فریضہ حج کی ادائیگی سے واپسی پر یہ خبریں دیکھ کر مجھے بہت افسوس ہوا کہ گجرات کے سیکڑوں مسلمانوں کے قاتل قصائی کے نام سے معروف نریندرا مودی کو یواے ای کا اعلیٰ ترین سول ایوارڈ دیا جا رہا ہے جو کہ یو اے ای کے بانی آپ کے والد شیخ زید کے نام سے معنون ہے۔ شیخ زید بہت ہی قابل احترام شخصیت تھے وہ کچلے ہوئے عوام کی مدد کرنے والے ایک مخیر اور فراخدل انسان کی حیثیت سے تاریخ میں ہمیشہ زندہ رہیں گے اللہ ان کو اپنے جوار رحمت میں جگہ دے۔ ایک ایسے شخص کو جو کشمیری عوام کو کچلنے میں مصروف ہے شیخ زید کے نام سے معنون ایوارڈدیئے جانے سے نہ صرف یہ کہ اس اہم اور باوقار ایوارڈ پر سوال اٹھیں گے، بلکہ اس کی وجہ سے دنیا میں آپ کے اخلاقی شعور کے بارے میں بھی بحث شروع ہوسکتی ہے۔ میں آپ سے کہوں گی کہ نہ صرف اس لئے کہ کشمیری عوام بھی آپ کے ہم مذہب ہیں بلکہ اس لئے بھی کہ انسان کی حیثیت سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور شیطانیت کے خلاف کھڑا ہونا ہمارا فرض ہے مودی کویہ ایوارڈ دینے کے فیصلے پر نظر ثانی کریں۔ انھوں نے لکھاہے کہ اگربھارت کے ساتھ تجارتی تعلقات کی وجہ سے آپ کشمیری عوام کیلئے سخت موقف اختیار کرنے یہاں تک کہ ان کی حمایت میں آواز اٹھانے سے بھی قاصر ہیں تو کم از کم اپنے دل میں نریندرا مودی کی کارروائیوں کی مذمت کریں اور ایک ظالم کی حمایت کرنے اور اسے اعزاز دینے سے گریز کریں۔ انھوں نے لکھا ہے کہ مودی نے کشمیر کو دنیا میں فوجیوں کے اجتماع کا سب سے بڑا علاقہ بنا دیا ہے مودی نے گزشتہ کم وبیش 15 دن سے کشمیر کے عوام کا مکمل لاک ڈائون کیا ہوا ہے، اس نے کشمیری عوام کے ذرائع مواصلات، انٹرنیٹ اور مواصلات کے دیگر ذرائع بند کر رکھے ہیں وہاں سیاسی رہنما گھروں میں نظر بند ہیں، سیاسی کارکنوں کو پیلٹ گن سے زخمی کیا جا رہا ہے کرفیو اور خاردار تار لگا کر دارالحکومت کو ایک کھلی جیل میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ کشمیر میں 5روزہ فیکٹ فائنڈنگ مشن سے واپسی پر آل انڈیا پروگریسو ویمنز ایسوسی ایشن کی کویتا کرشنن نے بتایا ہے کہ کشمیر عملی طور پر فوج کے محاصرے میں ہیں اور وہ مقبوضہ عراق یا مقبوضہ فلسطین کا نقشہ پیش کر رہا ہے۔ انھوں نے اپنے خط میں شیخ زید کو لکھا ہے کہ بھارتی حکومت کی کارروائیوں نے عام آدمی کی زندگی مشکلات سے دوچار کر دی ہے اور حقوق انسانی کی خلاف ورزیوں کی وجہ سے وہ شدید کرب و اذیت میں مبتلا ہیں