فلائٹ دو گھنٹے لیٹ ، ایک پائلٹ کم ہے۔ جہاز مسافر نے اڑادیا

مانچسٹر سے ہسپانوی شہر الیکانتے جانے والی ایزی جیٹ کی پرواز پائلٹ نہ ہونے کے سبب تاخیر کا شکار تھی۔
برطانوی ایئرلائن ایزی جیٹ کی مانچسٹر سے اسپین کے شہر الیکانتے جانے والی پرواز اس لیے تاخیر کا شکار ہو رہی تھی کیوں کہ جہاز اڑانے کے لیے پائلٹ دستیاب نہیں تھا۔ لیکن اس صورت حال میں ایک غیر متوقع حل سامنے آیا۔واقعہ تو پیر دو ستمبر کے روز پیش آیا تھا لیکن یہ خبروں کی زینت اس وقت بنا جب گزشتہ روز ایک ویڈیو وائرل ہوئی جس میں ایک شخص مائیکرو فون پر دیگر مسافروں سے گفتگو کرتا دکھائی دے رہا ہے۔ ویڈیو مشیلے پوٹس نامی ایک مسافر نے بنائی اور محو گفتگو شخص کا نام مشائیل بریڈلی ہے۔بریڈلی اپنی بیوی اور بچے کے ساتھ چھٹیاں منانے کے لیے الیکانتے جا رہے تھے لیکن فلائٹ تاخیر کا شکار ہو گئی۔ وہ پائلٹ ہیں اور ایزی جیٹ ہی کے ساتھ کام کر رہے ہیں۔ بریڈلی کے مطابق سفر پر روانہ ہونے کے لیے وہ ایئرپورٹ پر بیٹھے تھے کی اس دوران ان کی بیوی نے انہیں چپت رسید کرتے ہوئے کہا، ”فلائٹ دو گھنٹے لیٹ ہو گئی ہے کیوں کہ ایک پائلٹ کم ہے۔‘‘ خطرہ تھا کہ پائلٹ نہ ہونے کے سبب فلائٹ ہی منسوخ کر دی جائے گی۔
بریڈلی اس ویڈیو میں تفصیل بتاتے ہوئے یہ کہتے دیکھائی دیتے ہیں، ”پندرھویں رو میں میرا بیٹا اور بیوی بیٹھے ہیں۔ بیوی سے چپت کھانے کے بعد میں نے سوچا کیا (ایزی جیٹ کو) فون کیا جائے۔ فون کر کے میں نے کہا میں ٹرمینل پر کھڑا ہوں، کرنے کو کچھ نہیں، لائسنس بھی میرے پاس ہے صبح تین بجے بیوی کی چپت بھی کھائی۔ میں چھٹی منانا چاہتا ہوں، اگر آپ کو مدد چاہیے ہو تو میں یہاں کھڑا ہوں اور جانے کو تیار ہوں۔‘‘ایزی جیٹ کے دفتر سے محض 38 سیکنڈز کے بعد ہی بریڈلی کو فون کر کے درخواست کی گئی کہ کیا وہ پائلٹ کا فریضہ سرانجام دینے کو تیار ہیں۔ یوں بیوی کی ایک چپت سے جہاز کو پائلٹ مل گیا اور مسافر اپنی منزل کی جانب روانہ ہو پائے۔