ایک اورخلیجی ملک کاغیرملکی کارکنوں کے ویزوں پر پابندی کااعلان

سعودی عرب کی طرح خلیج کے دیگر ممالک بھی مقامی شہریوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے اور غیر ملکی کارکنوں کی خدمات پر زیادہ انحصار نہ کرنے کی پالیسی اپنا رہے ہیں، سلطنت عمان نے بھی غیر ملکی کارکنوں کو 6 ماہ کیلئے ویزے جاری نہ کرنے کا اعلان کردیا۔
غیر ملکی میڈیا کے مطابق عمان کے وزیر افرادی قوت عبداللہ بن ناصر بن عبداللہ البکری نے بتایا کہ ’آئندہ 6 ماہ تک نجی اداروں کیلئے غیر ملکی ملازمین کی آمد پر پابندی لگادی گئی ہے۔
وزیر افرادی قوت البکری کا یہ بیان سلطنت عمان کے سرکاری گزٹ میں بھی شائع کردیا گیا ہے۔
البکری نے فیصلے کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ انہوں نے ملازمین کی درآمد پر پابندی کا فیصلہ 2003ء میں جاری کردہ سلطانی فرمان کو بنیاد بنا کر کیا ہے۔
علاوہ ازیں 2019ء کے آغاز میں وزارت نے بھی سلطانی فیصلے پر عملدرآمد کا عندیہ دیا تھا۔ وزارت نے بعض شعبوں میں عارضی طور پر غیر ملکی ملازمین کو بلانے پر پابندی لگانے کی بات کی تھی۔
سلطنت عمان کے سرکاری گزٹ کے مطابق یہ پابندی 6 ماہ کیلئے لگائی گئی ہے جو تعمیرات اور صفائی کے شعبوں تک محدود ہوگی۔ یہ پابندی ایسے اداروں پر لاگو نہیں ہوگی جن میں 100 یا اس سے زیادہ کارکن ہوں گے۔
غیر ملکی کارکنوں پر پابندی کا اطلاع ان اداروں پر بھی نہیں ہوگا جنہوں نے سرکاری منصوبوں کے ٹھیکے لے رکھے ہوں گے