اقامے سے متعلق سعودی حکومت کا بڑا اعلان

ریاض : سعودی عرب کے 218 میں منظور ہونے والے قانون کے مطابق اقامہ (رہائشی مرمٹ) ساتھ نہ رکھنے والے افراد 3 ہزار ریال تک جرمانہ عائد کیا جاسکتا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق سعودی حکام کی جانب سے 2018 میں ایک قانون منظور کیا گیا تھا جس کے تحت اقامہ (رہائشی مرمٹ) ساتھ نہ لے کر گھر سے نکلنے والے افراد کو گرفتار کرنے اور جرمانہ عائد کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔سعودی وزارت داخلہ کی جانب سے اقامہ ساتھ نہ رکھنے پر قید و جرمانے کی سزائیں مقرر ہیں، جس میں 3 ہزار ریال جرمانہ بھی شامل ہے۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق اقامہ اس بات کا ثبوت ہوتا ہے کہ سعودی عرب میں مقیم غیر ملکی شہری قانونی طور پر ریاست میں قیام پذیر ہے اور اقامہ غیر قانونی اور قانونی غیر ملکیوں میں تفریق پیدا کرتا ہے۔اقامہ کارڈ گم ہوجانے پر اس کے بارے میں فوری طور پر اپنے ادارے کو مطلع کیا جانا ضروری ہے تاکہ وہاں سے قانونی کارروائی کا آغاز کرتے ہوئے متعلقہ ادارے کو اقامہ کارڈ گم ہونے کی رپورٹ کی جاسکے۔گمشدہ اقامہ کارڈ کی اطلاع محکمہ پاسپورٹ (جوازات) کو دی جاتی ہے جبکہ ایسے علاقے یا قصبے جہاں جوازات کا ذیلی ادارہ نہیں ہو وہاں پولیس سٹیشن میں رپورٹ کرانا ضروری ہے، پولیس سٹیشن پر کی جانے والی رپورٹ کی کاپی اس امر کی دلیل ہوگی کہ آپ قانونی طورپر مملکت میں مقیم ہیں اور آپ کا اقامہ گم ہو چکا ہے۔
گمشدہ اقامہ کارڈ کے بدلے میں دوسرا اقامہ جاری کرانے کے لیے پولیس رپورٹ کے ساتھ غیر ملکی کارکن کو اپنے کفیل کی جانب سے درخواست بھی جمع کرانی ہوتی ہے جس میں اقامہ گم ہونے کے بارے میں اہم معلومات کا ذکر کیا گیا ہو۔