لندن میں پولیس افسران کی کارروائی، انسانی اسمگلنگ کے مشتبہ شکار 7 افراد کو بچالیا

لندن ( دوست نیوز) خصوصی تربیت یافتہ پولیس آفیسرز نے لندن میں باربر شاپس پر کارروائی کرتے ہوئے انسانی اسمگلنگ کے مشتبہ شکار سات افراد کو بچا لیا جن میں دو بچے بھی شامل ہیں ۔ حکام کو لندن میں باربر شاپس میں کام کرنے والے افراد کے بارے میں شبہات کی اطلاعات ملی تھیں ۔ نارتھ ویسٹ لندن میں باربر شاپس پر کام کرنے والوں کے بارے میں انسانی سمگلنگ کے حوالے سے خدشات کی اطلاعات تھیں جس کے بعد میٹ پولیس نے تحقیقات کا آغاز کیا ۔ انسانی اسمگلنگ کے ممکنہ متاثرین کی تلاش کیلئے آپریشن میں 100 افراد نے حصہ لیا جن میں سوشل سروسز، امیگریشن، این ایچ ایس اور چیرٹی کے اہلکار بھی شامل تھے ۔ میٹ نے بتایا کہ کسی انسانی اسمگلر کی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ۔ پولیس فورس نے کہا ہےکہ وہ 12 فروری کو برینٹ ، بارنیٹ اور ہیرو کونسل کے ایریاز میں مختلف ایڈریسز پر چار ماہ سے انسانی سمگلنگ کے شکار کمزور لوگوں افراد کی تلاش کا کام کر رہی تھی ۔ پولیس نے بتایا کہ مشتبہ متاثرہ افراد کو قریبی استقبالیہ مرکز میں لےجایا گیا جہاں انہیں طبی امداد اور مدد فراہم کی گئی ۔قائم مقام ڈیٹیکٹو انسپکٹر مارک راجرز نے کہا کہ انسانی سمگلنگ، ماڈرن سلیوری اور جنسی استحصال اکثر نظروں میں نہیں آتی اور عام طور پر ایسا ہوتا ہے کہ ان جرائم کا ارتکاب کرنے والے کم خوش قسمت افراد ان کمزور اور پسماندہ افراد کا استحصال کرتے ہیں جو بہتر زندگی کیلئے ہماری کاؤنٹی کا سفر کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا مجھے امید ہے کہ یہ آپریشن ان چونکا دینے والے جرائم کے بارے میں عوام میں آگاہی اور بیداری پیدا کرے گا اور ہمارا یہ آپریشن انسانی سمگلنگ کی لعنت میں ملوث افراد کیلئے بھی واضح پیغام کہ ہم انہیں سناخت کر کے انصاف کے کٹہرے میں لانے کیلئے تمام ایجنسیوں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ مل کر کام کریں گے