کورونا کے خوف سے ایران میں جعلی شراب پینے سے 180 افراد ہلاک

ایران میں کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے شراب پینے سے ہلاک افراد کی تعداد 180 تک جا پہنچی ہے ۔ ایران کی سرکاری نیوز ایجنسی ارنا کے مطابق لوگوں کی بڑی تعداد اس غلط اطلاع پر شراب پی کہ اس طرح وہ ایران میں بڑے پیمانےپر پھیلے کورونا وائرس سے محفوظ ہو جائیں گے
ایران میں کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے شراب پینے سے ہلاک افراد کی تعداد 180 تک جا پہنچی ہے۔ایران کی سرکاری نیوز ایجنسی ارنا کے مطابق لوگوں کی بڑی تعداد اس غلط اطلاع پر شراب پی کہ اس طرح وہ ایران میں بڑے پیمانے پر پھیلے کورونا وائرس سے محفوظ ہو جائیں گےلیکن شراب ان کے لیے زہر ثابت ہوئی۔ارنا کی رپورٹ کے مطابق غیر قانونی شراب پینے سے سب سے زیادہ 36 ہلاکتیں ایران کے جنوب مشرقی صوبے خزیستان میں ہوئیں جو تین روز قبل تک زیستان میں کورونا وائرس کے باعث ہونے والی براہ راست 18 ہلاکتوں سے دو گنا زیادہ ہے۔ زیستان کے علاوہ شراب پینے سے 7 ہلاکتیں شمالی علاقے البورز اور ایک کرمان شاہ میں ہوئی۔
خیال رہے کہ ایران میں مسلمانوں کے شراب پینے پر سخت پابندی عائد ہے لیکن اس کے باوجود میڈیا پر بڑی تعداد میں اسمگل شدہ شراب پینے کے کیسز رپورٹ ہوتے ہیں۔واضح رہے ایران میں کورونا وائرس کے باعث رکن پارلیمنٹ فاطمی رہبر بھی ہلاک ہو چکی ہیں جب کہ ایران کی نائب صدر برائے خواتین میں بھی کورونا وائرس سمیت کئی اراکین پارلیمنٹ میں وائرس کی تصدیق ہو چکی ہےدریں اثنا جعلی شراب سے متعلق تحقیقات کے سلسلے میں 17 افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے